اہم القاعدہ کمانڈر ابو خلیل السوڈانی ہلاک


CKr9wyLXAAAI2On.jpg large

اہم القاعدہ کمانڈر ابو خلیل السوڈانی ہلاک

افغانستان میں امریکی فضائی کارروائی میں القاعدہ کے خود کش بم دھماکوں کے انچارج اور سینئر کمانڈر سمیت تین شدت پسند وں کو افغان صوبہ پکتیا میں ہلاک ہو گئے۔ شدت پسند تنظیم القاعدہ کا کمانڈر ابو خلیل السوڈانی 11 جولائی کو فضائی حملے میں ہلاک ہوا ہے۔ السوڈانی حملے میں ہلاک ہونے والے ان تین میں سے ایک شدت پسند تھے، ان کی ہلاکت سے دنیا میں القاعدہ کی کارروائیوں کو دھچکا لگے گا۔

ہلاک ہونے والے کمانڈر کو القاعدہ کے رہنما ایمن الظواہری کے قریبی ساتھیوں میں شمار کیا جاتا تھا اور امریکی محکمۂ دفاع کے مطابق وہ نیٹو، افغان اور پاکستانی افواج پر حملوں کی نگرانی بھی کرتے تھے۔
السوڈانی القاعدہ کی سینئر شوریٰ کے رکن، خود کش بم دھماکوں اور آپریشنز کے اسکواڈ کے سربراہ ہونے کے ساتھ ساتھ امریکا کے خلاف حملوں کی منصوبہ بندی کرنے والے میں براہ راست ملوث تھے۔القاعدہ کمانڈر نے اتحادی، افغان اور پاکستانی افواج کے خلاف براہ راست براہ راست آپریشن کی ہدایت کی اور وہ القاعدہ کے سرکردہ رہنما ایمن الظواہری کے قریبی ساتھی تھے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق پاکستانی اور افغان طالبان  گروپوں نے سوڈانی کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے جس میں پاکستانی طالبان گروپ کا کہنا ہے کہ خلیل سوڈانی کافی عرصے تک شمالی وزیرستان سے اپنی کارروائیاں کرتا رہا تاہم پاکستانی فوج کے آپریشن کے بعد اس نے افغانستان کو اپنا مسکن بنا لیا جب کہ سفرکے دوران وہ ہمیشہ اپنے ہمراہ 2 محافظ رکھتا اور اس کی گاڑی میں ہر وقت خودکش جیکٹس بھی موجود ہوتی تھیں۔
القاعدہ کے اعلیٰ سطح کے کمانڈر ابو خلیل السوڈانی ,نیٹ ورک کا ایک کلیدی ستون تصور کیا جاتا تھااور القاعدہ کے لیے انتہائی ناگزیر تھا اور اس کی ہلاکت اس دہشت گرد نیٹ ورک کے لیے ایک بڑا نقصان ہے۔ السوڈانی کی موت سے دہشت گرد نیٹ ورک کی سرگرمیاں طویل عرصے تک مفلوج ہو کر رہ جائیں گی۔ القاعدہ کے اس اہم رہنما کی ہلاکت کے پاکستان اور افغانستان میں القاعدہ کو کافی نقصان ہوا ہے۔ القائدہ کی صف اول کی قیادت بے اثر ہو چکی ہے اور اعلٰی کمانڈروں کی ہلاکت کا سلسلہ جاری رہنے سے تنظیم کے لئے حالات سازگار نظر نہیں آتے۔ السوڈانی کی موت افغانستان و پاکستان کے لیے بہت اہم اور مفید ہے کیونکہ القاعدہ کی سینئر شوریٰ کے رکن، خود کش بم دھماکوں اور آپریشنز کے اسکواڈ کے سربراہ ہونے کے ساتھ ساتھ امریکا کے خلاف حملوں کی منصوبہ بندی کرنے والے میں براہ راست ملوث تھے۔ القائدہ قاتلوں اور ٹھگوں کی جماعت ہے اور اس کے ہاتھ مسلنوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں۔ القائدہ مسلمانوں اور اسلام کی دشمن ہے اس کی اسلام اور مسلم کش سرگرمیوں کی وجہ سے مسلمانوں اور اسلام کا بہت بھاری نقصان ہوا ہے۔

Advertisements