کابل ایئرپورٹ کے قریب دھماکا،5 افراد ہلاک


55c87871f0397

کابل ایئرپورٹ کے قریب دھماکا،5 افراد ہلاک

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں ائیرپورٹ کے قریب غیر ملکی قافلے پر خود کش کار بم دھماکے میں 5افراد ہلاک اور سترہ سے زائد زخمی ہوگئے۔افغان میڈیا کے مطابق حکام کا کہنا ہے کہ قافلے پر حملہ کابل انٹرنیشنل ائر پورٹ کے پہلے گیٹ کے قریب کیا گیا، ہلاک ہونے والوں میں ایک خاتون اور بچہ شامل ہیں، حکام کے مطابق حملے کے لیے بارودی مواد سے بھری گاڑی استعمال کی گئی۔ اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق طالبان نے کابل ایئر پورٹ پر خود کش کار بم دھماکے کی ذمہ داری قبول کرلی ہے ۔

1665541

کابل پولیس کے نائب چیف سید گل آغا روحانی کے مطابق دھماکہ کابل ایئر پورٹ کی پہلی چیک پوسٹ پر ہوا ہے۔
افغانستان کے دارالحکومت کابل میں گذشتہ چند دنوں میں دہشت گردی کی کئی کارروائیاں ہوئی ہیں اور یہ تازہ حملہ بظاہر انہی کارروائیوں کی ایک کڑی نظر آتا ہے۔

kabul-sucide-attack_8-10-2015_193807_l
اسلامی ریاست کیخلاف مسلح جدوجہد حرام ہے۔ دہشتگردی، بم دہماکوں اور خودکش حملوں کی اسلامی شریعہ میں اجازت نہ ہے کیونکہ یہ چیزیں تفرقہ پھیلاتی ہیں۔ انتہا پسند و دہشت گرد افغانستان کا امن تباہ کرنے اور اپنا ملک تباہ کرنے اور اپنے لوگوں کو مارنے پر تلے ہوئے ہیں۔ دہشتگرد نہ ہی مسلمان ہیں اور نہ ہی انسان ،بلکہ دہشتگرد انسانیت کے سب سے بڑے دشمن ہیں۔طالبان دہشت گردوں کا نام نہاد جہاد شریعت اسلامی کے تقاضوں کے منافی ہے۔ جہاد کی غرض وغایت یہ ہے کہ فتنہ ختم کیا جائے ، امن کو قائم کیا جائے، جہاد، خواہ دفاعی ہویا اقدامی ،یہ ظلم وبربریت اورانسان دشمنی کے خلاف ایک تحریک ہے۔ اگر جہاد کی وجہ اور علت کفر ہوتی تو اسلام جنگ کے موقع پرغیر مسلم عورتوں، بچوں، بوڑھوں، معذوروں اور راہبوں کوقتل کرنے سے منع نہ کرتا۔ اگر جہاد کا مقصد غیر مسلموں کو صفحۂ ہستی سے نابود کرنا ہوتا تو صدیوں حکومت کرنے والے شاہان ہند کسی غیر مسلم فرد کو سرزمین ہندوستان پر سانس لینے کاحق نہ دیتا۔قرآن کی زبان میں مسلسل فساد فی الارض کے مرتکب ہو رہے ہیں۔ اسلام امن اور محبت کا دین ہے۔ دہشتگرد تنظیمیں جہالت اور گمراہی کےر استہ پر ہیں۔جہاد کے نام پر بے گناہوں کا خون بہانے والے دہشتگرد ہیں۔یہ دہشتگرد اسلام کو بدنام اور امت مسلمہ کو کمزور کر رہے ہیں۔ اسلام ایک بے گناہ کے قتل کو پوری انسانیت کے قتل سے تعبیر کرتا ہے۔ اسلام امن اور سلامتی کا دین ہے اور دہشتگرد اسلا م اور امن کے دشمن ہیں۔ دہشتگرد تنظیمیں جہالت اور گمراہی کےر استہ پر ہیں۔جہاد کے نام پر بے گناہوں کا خون بہانے والے دہشتگرد ہیں۔یہ دہشتگرد اسلام کو بدنام اور امت مسلمہ کو کمزور کر رہے ہیں۔

اسلام میں عورتوں اور معصوم و بے گناہ بچوں کا قتل حالت جنگ میں بھی ممنوع اور خلاف شریعہ ہے۔ نیز یہ ملا عمر کے حکم کی خلاف ورزی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ عورتوں اور بچوں کو ہلاک نہ کیا جائے۔

Advertisements