عیدالضحی کی آمد آمد


41782-islamabadzafaraslam-1351275840-953-640x480

عیدالضحی کی آمد آمد

عیدالضحی کی آمد کے ساتھ ہی قربانی کے جانوروں کی منڈیاں سج گئی ہیں لیکن جانوروں کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافے نے ، قربانی کے خواہشمند عام آدمی کی امیدوں پر اوس ڈال کر رکھ دی ہے۔ بکروں، مینڈہوں اور گائے کی قیمتوں میں پچھلے سالوں کی نسبت بے پناہ اضافہ ہو چکا ہے۔ مویشیوں کی منڈیوں میں جانور تو موجود ہیں مگر گاہک ندارد۔

183316-cowmandi-1381141486-772-640x480

to-purchase-sacrificial-animals-on-eid

بیوپاریوں کا کہنا ہے کہ انہوں نے جانوروں کو بڑی محنت سے پالا ہے اور مہنگائی کی وجہ سے جانوروں کی خوراک پر کافی لاگت آتی ہے نیز باربرداری پر اچھے خاصے روپے اٹھ جاتےہیں اور وہ نقصان پر جانور فروخت کرنے سے رہے۔ خریداروں کا نقطہ نظر یہ ہے کہ تمام منڈیوں سے جانوروں کی قیمتوں کو چیک کرنے کے بعد آخری دنوں میں خریداری کریں گے ، اس امید سے بھی کہ اس وقت تک بیوپاری قیمتیں نیچے لانے پر مجبور ہو چکے ہونگے۔اگرچہ منڈی میں خوبصورت بکرے، چھترے،دنبے، بیل،گائے، بچھڑے اور اونٹ موجود ہیں مگر خریدار اونچی قیمتوں کے ہاتھوں مجبور و لاچار ہیں کہ کس طرح امسال سنت ابراہیمی ادا کی جائے۔ مہنگائی کےان حالات میں،جہان لوگوں کے لئے اپنا روزمرہ کا خرچ چلانا مشکل ہو رہا ہے،وہ قربانی کے لئے جانور کہاں سے خریدیں گے، یہ عید کچھ پھیکی پھیکی سی لگ رہی ہے۔

23-12

440664_71549783

images%d8%b7%da%be%d8%a6

index%d8%a8%da%be%d8%a6

134

جانوروں کی قیمتوں میں اضافے کی ایک وجہ مقامی اور عالمی سطح پر گوشت کی طلب میں ہونے والا اضافہ ہے، گوشت کی برآمد میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اور اس کی وجہ سے طلب و رسد کا فرق تبدیل ہوتا رہتا ہے۔پاکستان اسلامی دنیا میں سب سے زیادہ قربانی کرنے والا ملک ہے جہاں اس سال توقع ہے کہ 1 کروڑ اور 5 لاکھ جانور قربان کئے جائیں گے۔  پاکستان کے بعد انڈونیشیا اور سعودی عرب آتے ہیں۔کراچی میں لگنے والی پاکستان کی سب سے بڑی مویشی منڈٰی میں 20 فیصد جانور امراء کو مد نظر رکھ کر لائے جاتے ہیں جو انتہائی تگڑے اور اعلیٰ نسل کے ہوتے ہیں، ان کی زائد قیمتوں کا اثر دیگر جانوروں کی قیمت پر بھی پڑتا ہے۔
شہر کی چھو ٹی بڑی مارکیٹوں اور بازاروں کی رونقو ں میں اضافہ،جوتیوں،کپڑوں اور کاسمیٹکس کے سٹال سج گئے،تمام بازاروں کو برقی قمقمقوں کے ساتھ سجا دیا گیا خواتین اور بچوں کابے پناہ رش،مویشی منڈیوں میں جانوروں کے قیمتوں کے ساتھ کپڑوں اور جوتوں کی قیمتیں بھی آسمان سے باتیں کر رہی ہیں ۔ غریب و متوسط طبقہ اپنی چادر میں رہتے ہو ئے عید کی خوشیا ں منا نے کےل ئے پریشان ہیں۔والدین کے لئے بچوں کی خواہشا ت کو پورا کر نا سر درد بنا ہوا ہے ایک طرف بچوں کی فرمائشوں کے انبار لگے ہیں تو دوسری جانب مہنگا ئی کا جن بے قابو ۔

l_173544_081457_updates
عید الاضحی قریب آتے ہی مزیدار پکوانوں کو لذت دینے والے مصالحوں اور سبزیوں کی قیمتوں نے ایسی اڑان بھری کہ شہری دیکھتے ہی پریشان ہوگئے، کہتے ہیں قیمتوں کو کنٹرول کرنے والا کوئی بھی نہیں ہے۔
چٹ پٹے پکوانوں کیسے بنائیں؟ مزیدار کڑائی کیسے بنائیں،عید قرباں آتے ہی عوام کو فکر ستانے لگی، پکوانوں کو لذت دینے والے لوازمات کی قیمت ایسی بڑھی کہ ہفتے بھر میں قیمتوں میں دوگنا اضافہ ہوگیا۔
کراچی میں لیموں 80 روپے سے بڑھ کر 160 روپے ، لہسن 250 روپے سے 400 روپے ، جبکہ ادرک کی قیمت 40 روپے بڑھ کر 120 روپے کلو فروخت ہورہی ہے۔ ٹماٹر، پیاز ، آلو ، کھیرا ، ہری مرچ ، کون سی سبزی ہے جس پر مہنگائی کی چھری نہیں چلی ۔

کراچی ہی نہیں لاہور میں بھی چٹ پٹےنمکین کھانے کھانے سے پہلے ہی عوام کے زخموں پر سبزی والوں نے نمک چھڑک دیا۔ پیازکی سرکاری قیمت 26 سے 28 روپے کلو، لیکن مارکیٹ میں 35 سے 40 روپےمیں بک رہی ہے۔ پچاس روپے کلو والے ٹماٹر 80 روپے کلو، لہسن 300 روپے اور ادرک 130 کے بجائے 180 سے200 روپے کلو فروخت ہورہی ہے جبکہ ہری مرچ 55 روپے کے بجائے 100 روپے کلو بیچی جا رہی ہے۔

عیدالضحیٰ ہمیں قربانی ،ایثار و پیار محبت کا  درس دیتی ہے لہذا دوستو عید قربان کے  موقع  پر اپنے ہمسائیوں،دوستوں ،رشتہ داروں ، ہموطنوں اور غریبوں و مساکین کو اپنی خوشیوں میں شامل کرنا نہ بھولئیے گا۔

Advertisements