دہشتگردی کو شکست دینے کے سوا کوئی راستہ نہیں


_94631431_mediaitem94631430

دہشتگردی کو شکست دینے کے سوا کوئی راستہ نہیں

پاکستان کی ملکی سالمیت اور اس کی ترقی و خوشحالی کے لئے دہشتگری کا خاتمہ انتہائی ضروری ہے کیونکہ دہشتگردوں نے ملک کی جڑوں کو کھوکھلا کر دیا ہے۔ دہشت گرد انسانیت اورامن کے دشمن ہیں ۔دہشتگردوں کا کوئی دین ومذہب نہیں ، ان شدت پسندوں کی دہشتگردانہ کارروائیوں سے کوئی شہری بھی محفوظ نہیں۔ جب تک دہشتگردوں کو کیفرکردارتک پہنچا یا نہیں جاتا اس وقت تک ملک میں امن و استحکام ممکن نہیں۔

c4jlniqwcaif64m

دہشت گرد ملک میں امن کے دشمن ہیں اور یہ جہاں چاہیں واردات کرکے اپنے ہو نے کا احساس دلاتے ہیں جس سے ملک میں جاری نیشنل ایکشن پلان کی کارکردگی پر سوالات جنم لے رہے ہیں ۔

pak-army-during-kpk-operation-in-pakistan

739338-quettablast-1487167925-797-640x480

_94633109_mediaitem94631605

 ملک میں عام شہریوں سے لے کر ججز ، فوجی افسران، علماء، طالب علم و اساتذہ ،بے یارو مددگار مسافر، صحافیوں سمیت کسی کی بھی جان محفوظ نہیں، عبادت گاہوں سے لیکر اقلیتی برادری تک اور سکولوں سے لیکر سرکاری اہلکاران سمیت تمام طبقات دہشت گردی کا شکار ہیں۔ پورا ملک بد امنی کی تصویر بنا ہوا ہے اس لئے اب وقت ہے عوام کو اصل حقائق سے آگاہ کیا جائے کیونکہ جب تک دہشت گردوں کے سرپرستوں کو بے نقاب کرکے انہیں کیفر کردار تک نہیں پہنچایا جاتا اس وقت تک ملک میں امن و استحکام کا خواب شرمندۂ تعبیر نہیں ہوسکتا۔

56205e6e39551

imagesdabedaafd8aa

_92414005_09c54e99-a6ee-4f34-8311-a2a7682f6cd9

pakistan-suicide-attack-qalandar

150816124410_shuja_khanzada_624x351_app

554a27e35d766

وزیراعظم محمد نوازشریف نے لاہورمیں ناقص سکیورٹی پر ناراضی کا اظہارکرتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گردوں کے خلاف بلا تفریق کارروائیاں جاری رہیں گی اور دہشت گردوں کے ساتھ ان کے سہولت کاروںاورنظریے کوبھی ختم کرنا ضروری ہے‘ ان کے خلا ف بے رحم آپریشن کیاجائے‘ شہریوں کے تحفظ میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی ، دہشت گردوں کو شکست دینے کے سوا کوئی دوسرا راستہ نہیں‘دہشت گردی کے خلاف جنگ حق و باطل کے درمیان معرکہ ہے‘ قومی عزم کے ذریعے دشمن کو شکست دیں گے۔دیرپا امن ہماری اولین ترجیح ہے‘ قیام امن میں رکاوٹ کسی صورت برداشت نہیں کریں گے‘بزدلانہ کارروائیاں ہمارے عزم کو متزلزل نہیں کرسکتیں‘ہمارے پختہ ارادوں کے سامنے دشمن کو شکست ہوگی‘دہشت گردی کے خلاف جنگ کو منطقی انجام تک پہنچائیں  گے ‘ دشمنوں کو قوم کے عزم کے ساتھ شکست دیں گے‘امن وامان پرکوئی سمجھوتہ نہیںہوگا‘دہشت گردی کے ناسورکو جڑسے اکھاڑ پھینکیں گے‘جبکہ پوری قوم دہشت گردوں کے خلاف متحد اور سکیورٹی فورسزکے ساتھ ہے۔نواز شریف نے کہا کہ شہریوں کا تحفظ ہر حال میں ممکن بنایا جائے جس کے لیے پولیس کو موثر ٹریننگ دی جائے تاکہ دہشت گردی سے مقابلہ کیا جا سکے۔وزیر اعظم نے مزید کہا کہ مسلح افواج اور قانون نافذ کرنیو الے اداروں نے بے مثال قربانیاں دیںقوم بہادر افسران کی قربانیوں کو فراموش نہیں کرے گی‘دہشت گردی کا خاتمہ ہمارا قومی فریضہ ہے ہم اسے ہر صورت پورا کریں گے‘ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ شہر کے داخلی و خارجی راستوں کی سخت نگرانی کی جائے گی اور پولیس کے جوانوں کو دہشت گردوں سے مقابلے کے لیے موثر ٹریننگ فراہم کی جائے گی۔

news-1466659753-4775_large

Taliban-attacks-Afghan-court

CWUyZjOWsAIxtdn

وزیراعظم نوازشریف کی زیرصدارت سیکیورٹی صورتحال پر اجلاس ہوا جس میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، وزیرداخلہ چوہدری نثار، وزیرخزانہ اسحاق ڈار اورمشیرقومی سلامتی جنرل (ر) ناصر جنجوعہ نے شرکت کی، اجلاس میں ملک کی سکیورٹی صورتحال کا جائزہ لیا گیا جب کہ لاہور، کوئٹہ، مہمند ایجنسی اور پشاور میں دھماکوں کی شدید مذمت کی گئی۔ اجلاس کے شرکا نے ملک میں دہشت گردی اورانتہا پسندی کےمکمل خاتمے کے عزم کا اظہار کیا جب کہ دہشت گردوں اور ان کے نظریات کو کچل دینے کا فیصلہ کیا گیا۔

اجلاس میں سیاسی و عسکری قیادت میں اتفاق کیا گیا کہ دہشت گردوں کو کسی صورت سر اٹھانے نہیں دیں گے اور انہیں دوبارہ پنپنے نہیں دیا جائے گا۔ اجلاس کے شرکا کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف فورسزاورعوام نے بڑی قربانیاں دی ہیں اور دہشت گردوں کے خلاف فورسز کی قربانیوں کو ضائع نہیں ہونے دیں گے۔

12316435_1528696974111496_8370128736358883118_n

960060_613313042019792_1606165305_n

unlawful

 گزشتہ 5 روز کے دوران 6 خودکش دھماکوں سمیت 8 حملوں میں فوج ،پولیس اور سیکیورٹی اداروں کے اہلکاروں  سمیت 160 سے زائد عام شہری شہید اورسینکڑوں زخمی ہوچکے ہیں ۔سہون شریف کے انتہائی افسوسناک واقعہ کے بعد آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے دہشت گردوں اور ملک دشمنوں کو فوری بدلہ لینے کاسخت  پیغام  دیا ہے۔

طالبان و دیگر دہشتگرد ، قرآن کی زبان میں مسلسل فساد فی الارض کے مرتکب ہو رہے ہیں ۔ دہشتگرد ،دہشتگردی کر کے ملک میں امن و امان کی صورتحال پیدا کر کے ملک کو عدم استحکام میں مبتلا کرنا چاہتے ہیں۔

کسی بھی مسلم حکومت کے خلاف علم جنگ بلند کرتے ہوئے ہتھیار اٹھانا اور مسلح جدوجہد کرنا، خواہ حکومت کیسی ہی کیوں نہ ہو اسلامی تعلیمات میں اجازت نہیں۔ یہ فتنہ پروری اور خانہ جنگی ہے،اسے شرعی لحاظ سے محاربت و بغاوت، اجتماعی قتل انسانیت اور فساد فی الارض قرار دیا گیا ہے۔

اسلام امن اور محبت کا دین ہے۔ دہشتگرد تنظیمیں جہالت اور گمراہی کےر استہ پر ہیں۔ اسلام ایک بے گناہ کے قتل کو پوری انسانیت کے قتل سے تعبیر کرتا ہے۔بچوں اور عورتوں کا قتل حالت جنگ میں بھی منع ہے۔

طالبان جہاد نہ کر رہے ہیں بلکہز اتی اقتدار کےل ئے لڑ رہے ہیں جو کہ جہاد نہ ہے۔

 آپریشن ضرب عضب کے باعث دہشت گردوں کی ایک تعداد ضرب عضب کے علاقوں سے فرار ہو کر مختلف علاقوں میں چھپ گئی‘ اب ان دہشت گردوں کی باقیات وقفے وقفے سے مختلف علاقوں میں دہشت گردی کی واردات کر کے خوف و ہراس پھیلانے کی کوشش کرتی رہتی ہے۔
طالبان ، پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لئے ناسور ہیں۔

خودکش حملے، دہشت گردی اور بم دھماکے اسلام میں حرام ہیں اور قران و حدیث میں اس کی ممانعت ہے۔

 دہشت گرد قومی وحدت کیلیے سب سے بڑاخطرہ ہیں۔ طالبان ایک رستا ہوا ناسور ہیں اورپاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لئے اس ناسور کا خاتمہ ہونا ضروری ہے۔

اسلام کی اصل تعلیمات کو عام کرنا ہو گا اور سب کو یہ بتانا ہو گا کہ دین اسلام میں کسی بھی انسان اور مسلمان کی جان کی حرمت کی اہمیت کیا ہے اور جہاد اور دہشتگردی میں فرق کیا ہے۔

حال ہی میں رونما ہونے والے دہشتگردی کے واقعات ملک دشمن قوتوں کی جانب سے پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی سازش کی کڑی ہیں۔ ان تمام واقعات سے یہ نتیجہ اخذ کرنا غیر منطقی نہیں ہو گا کہ پاکستان کے اندرونی اور بیرونی دشمن دہشت گردی کی ہاری ہوئی جنگ اب بھی جاری رکھے ہوئے ہیں انہیں ناکام بنانے کیلئے ہمارے فیصلہ سازوں اداروں اور ایجنسیوں کو ہمہ وقت چوکس رہنا ہو گا۔ ہم دشمن کے شرسے محفوظ نہ ہیں، دہشتگردی کے خلاف یہ جنگ ا بھی جاری ہے اور قوم نے اسے ہر حال میں جیتنا ہے اس معاملے میں ہم ذرا سی بھی غفلت اور بھول چوک کے متحمل نہیں ہو سکتے۔

 

Advertisements