گوبھی کے اہم ترین فوائد


گوبھی کے اہم ترین فوائد

گوبھی ایک انتہائی اہم اور صحت بخش سبزی ہے جس میں غذائی اجزاﺀ کی ایک بھاری مقدار پائی جاتی ہے- پھول گوبھی ایک ایسی منفرد سبزی ہے جس کا استعمال انسان کو کئی عام اور خطرناک بیماریوں سے محفوظ رکھتا ہے- ان بیماریوں میں کینسر اور دل کی بیماریاں بھی شامل ہیں-پھول گوبھی غذائی اجزاﺀ کے حوالے سے ایک متاثر کن سبزی ہے- اس میں بہت کم کیلوریز پائی جاتی ہیں جبکہ وٹامن کی مقدار بہت زیادہ ہے۔

درحقیقت اس وہ تمام وٹامن اور معدنیات پائے جاتے ہیں جن کی انسان کو ضرورت ہوتی ہے- پھول گوبھی میں انتہائی کم کیلوریز کے علاوہ فائبر٬ وٹامن سی٬ وٹامن کے٬ وٹامن بی٬6 فولیٹ٬ پوٹاشیم٬ میگنیشیم اور فاسفورس پائے جاتے ہیں۔

گوبھی کو اینٹی بائیوٹک بھی سمجھا جاتا ہے جو مختلف انفیکشنز کو کنٹرول کرتی ہے اور انفیکشنز کے خلاف آپکے جسم میں قوت مدافعت پیدا کرتی ہے۔گوبھی میں ایسے اجزاء پائے جاتے ہیں جو دل کی شریانوں اور پھیپڑوں اور دل کی شریانوں میں پیدا ہونے والے انفیکشن کو روکتے ہیں ۔ گوبھی میں وٹامن سی کی وافر مقدار پائی جاتی ہے جو کہ جلد پر جھریاں پڑنے، جلد کی خرابیوں ، نظر کے امراض کے خلاف بہترین کام کرتی ہے ۔

اس کے علاوہ گوبھی میں وٹامن بی 6 بھی قابل ذکر مقدار میں پایا جاتا ہے جو بالوں اور میٹابولزم کیلئے بہترین کردار ادا کرتی ہے۔

گوبھی میں موجود فائٹو کیمیکلز، اینٹی آکسیڈنٹس، وٹامن، کیروٹونوئیڈز، فائبر اور دیگر فینولک مرکبات دماغی امراض ، کینسر، امراضِ قلب اور موٹاپے کو روکنے میں مددگار ہوتے ہیں اور پہلے یہ جان لیں کہ ایک پیالہ گوبھی میں کیا کیا اہم خزانے چھپے ہیں۔

اس میں 29 کیلوریز، صفر کے برابر شکر اور چکنائی، وٹامن سی کی روزانہ کی بنیاد پر 73 فیصد مقدار، فولیٹ، پینٹوتھونک ایسڈ، وٹام بی 6، کولائن، فائبر، اومیگا تھیر فیٹی ایسڈز اور وٹامنز موجود ہیں۔

گوبھی میں وٹامن سی بھرا ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ وٹامن کے کا ایک خزانہ ہے  جو چکنائیوں کو گھلانے میں مددگار ہوتا ہے۔ وٹامن کے ہڈیوں کو کمزور نہیں ہونے دیتا اور جسم میں جلن اور سوزش کو کم کرتا ہے۔

گوبھی سینے، جگر، آنت، پیٹ اور دیگر اقسام کے سرطان کو روکنے میں معاون ہوتا ہے۔ گوبھی کینسر کی رسولیوں پر اثر انداز ہوکر ان کی نشوونما کو روکتی ہےاور کینسر کی وجہ بننے والے خطرناک کیمیکلز کے مضر اثرات کو کم کرتی ہے۔

گوبھی کے تجربات سے بھی ثابت ہوا ہے کہ یہ کینسر کو روکتی ہے اور اس کی اہم وجہ گوبھی میں وافر مقدار میں پائے جانے والے سلفر کمپاؤنڈز ہیں۔ ان مرکبات کو ’’گلوکوسائنولیٹس‘‘ کہا جاتا ہے جو ایک پیچیدہ عمل کے ذریعے کینسر کو پھیلنے سے روکتے ہیں۔ یہ مرکبات ڈی این اے کی ٹوٹ پھوٹ کو روکتے ہیں  ایک اور مطالعے سے ثابت ہوا ہے کہ گوبھی کینسر کے دوبارہ حملے کو بھی روکتی ہے۔

گوبھی فالج، دل کے دورے، دماغی امراض اور ذیابیطس کے خلاف بھی مؤثر ہے۔ اس میں موجود وٹامن اور اومیگا تھری فیٹی ایسڈز دل کی شریانوں اور خون کی رگوں کو ہر قسم کی کثافت سے دور رکھتے ہیں اور کولیسٹرول کو بھی بڑھنے نہیں دیتے۔ گوبھی کے بارے میں ایک اور حیرت انگیز انکشاف یہ ہوا ہےکہ یہ جسم کے قدرتی دفاعی (امنیاتی) نظام کو اس کی حد میں رکھتی ہے اور اسے بدن کو نقصان پہنچانے سے روکتی ہے۔

گوبھی میں موجود اینٹی آکسیڈنٹس اور دیگر اجزا جسم میں فری ریڈیکلز کو روکتے ہیں اور جلن کو کم کرتے ہیں۔ گوبھی میں موجود بی ٹا کیروٹین، کیفک ایسڈ، سینامک ایسڈ، ریوٹین اور دیگر ضروری ایسڈ ہر طرح کی سوزش کو کم کرتے ہیں۔

گوبھی کے ایک کپ میں صرف 29 کیلوریز ہوتی ہیں اور چکنائیاں صفر۔ اس میں موجود فائبر بھوک کو کم کرتی ہے اور جسم کو دبلا بناتی ہے۔ گوبھی کی زیادہ مقدار آپ کو سیر کردیتی ہے اور مزید حراروں کی ضرورت نہیں پڑتی۔

یہ جسمانی ہارمون کو متوازن رکھتی ہے۔ واضح رہے کہ ہارمون کا توازن خراب ہونے سے جسم میں ایسٹروجن کی مقدار بڑھ جاتی ہے اور اس کی زائد مقدار خون میں شامل ہوکر کئی پیچیدگیوں اور امراض کی وجہ بنتی ہے۔

گوبھی میں موجود سلفروفین آنکھوں کے نازک حصوں کی حفاظت کرتا ہے۔ اس طرح نابینا پن، موتیا اور عمرکے ساتھ ساتھ اندھے پن کو ختم کرتا ہے۔

وٹامن ای سے بھرپور غذائیں جیسے گوبھی طویل المعیاد بنیادوں پر دماغی تنزلی کا باعث بننے والے امراض جیسے الزائمر اور پارکنسن کا خطرہ کم کرتے ہیں۔ محقیقین کا کہنا تھا کہ وٹامن ای سے بھرپور غذاﺅں کا استعمال مختلف دماغی امراض سے تحفظ دیتا ہے۔

Advertisements