لاہور میں ارفع کریم ٹاور کے قریب دھماکا ، پولیس اہلکارو ں سمیت 26 افراد شہید


لاہور میں ارفع کریم ٹاور کے قریب دھماکا ، پولیس اہلکارو ں سمیت 26  افراد شہید

ارفع کریم ٹاور کے قریب کوٹ لکھپت سبزی منڈی میں دھماکے کے نتیجے میں9پولیس اہلکاروں سمیت 26افراد شہید اور 58 افراد  زخمی ہیں جبکہ 11زخمیوں کی حالت تشویشناک بتائی جارہی ۔

ہے۔دھماکے کے وقت جائے حادثہ سے تجاوزات ہٹانے کا کام ہو رہا تھاجہاں پولیس کی نفری بھی موجود تھی۔دھماکے سے قریب کھڑی متعدد موٹر سائیکلیں اور گاڑیاں بھی تباہ ہو گئیں۔ شہید پولیس اہلکاروں  میں سب انسپکٹر ریاض، اے ایس آئی فیاض اور 7 کانسٹیبل شامل ہیں۔

ذرائع کا کہناہے کہ خود کش حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار ہو کر آ یا۔نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق ابتدائی طور پر یہ شبہ ظاہر کیا جارہاتھا کہ خود کش حملہ آور گاڑی پر سوار ہو کر آیا تاہم اب تفصیلات سامنے آ گئیں کہ حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار ہو کر آیا اور اس نے موٹر سائیکل گاڑی کے ساتھ ٹکرا دی ۔

http://dailypakistan.com.pk/lahore/24-Jul-2017/614194

کالعدم دہشت گرد تنظیم تحریک طالبان پاکستان نے لاہور میں ہونے والے خود کش بم دھماکے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے اور مبینہ خود کش حملہ آور کی تصویر بھی جاری کر دی ہے۔کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان کےترجمان محمد خراسانی نے دعویٰ کیا ہے کہ تنظیم کے خودکش بمبار نے لاہور میں موٹر سائیکل خودکش دھماکہ کیا ہے۔  نجی ٹی وی سٹی فورٹی ٹو کے مطابق لاہور میں آج ہونے والے بم دھماکے کی ذمہ داری کالعدم تحریک طالبان پاکستان نے قبول کر لی ہے،جبکہ مبینہ خودکش حملہ آور کی تصویر بھی جاری کردی ہے، خود کش حملہ آور کی عمر16سے18سال تھی جبکہ دھماکے میں10سے12کلوگرام بارودی مواد استعمال کیا گیا۔

وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف نے لاہور دھماکے کی مذمت کی اور زخمیوں کو بہترین علاج معالجے کی سہولیات فراہم کرنے کی ہدایات جاری کیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ’لاہور دھماکے میں کئی خاندان تباہ ہوئے جس کے بعد جذبات کے اظہار کے لیے الفاظ نہیں۔‘انہوں نے کہا کہ ’دھماکے کے ذمہ داروں کو نہیں چھوڑیں گے اور جاں بحق افراد کا خون رائیگاں نہیں جائے گا۔وزیر قانون پنجاب رانا ثنااللہ نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکومت نے دہشت گردی کی لعنت پر 70 سے 80 فیصد تک قابو پالیا۔

لاہور میں فیروز پور روڈ پر ارفع کریم ٹاور کے قریب ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں ہونے والے جانی نقصان پر سیاسی جماعتوں کے رہنما ﺅں کی جانب سے گہرے دکھ اوررنج کا اظہار کیا گیا ہے۔پاکستان تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کا کہنا تھا کہ شہدا کے لواحقین سے دلی ہمدردی اور جانوں کے ضائع پر ان کے خاندانوں کے دکھ میں برابر کے شریک ہیں۔پاکستان پیپلز پارٹی سندھ کے صدر نثار کھوڑو نے لاہور دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی۔اس کے علاوہ سابق وزیر اعظم پاکستان سید یوسف رضا گیلانی نے بھی اس پر اظہار افسوس کیا ہے۔پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفی کمال نے بھی لاہور حملے کی شدید الفاظ مذمت کی ہے۔اس کے علاوہ عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار نے بھی لاہور دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔لاہور میں ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں اب تک کی اطلاعات کے مطابق28 افراد شہید ہوچکے ہیں اور 66افراد زخمی ہیں۔

خودکش حملے اور بم دھماکے اسلام میں جائز نہیں یہ اقدام کفر ہےاسلام میں خود کش حملے حرام، قتل شرک کے بعد سب سے بڑا گناہ اوربدترین جرم ہے۔

اسلام ایک بے گناہ فرد کے قتل کو پوری انسانیت کا قتل قرار دیتا ہے۔ طالبان اور دوسری کالعدم  دہشت گرد تنظیمیں گولی کے زور پر اپنا سیاسی ایجنڈا پاکستان پر مسلط کرنا چاہتے ہیں ۔ 

طالبان جان لیں کہ وہ اللہ کی بے گناہ مخلوق کا قتل عام کر کے اللہ کے عذاب کو دعوت دے رہے ہیں اور اللہ اور اس کے پیارے رسول(ص) کی ناراضگی کا سبب بن رہے ہیں. پاکستانی طالبان کو سمجھنا چاہیے کہ وہ خودکش حملے  اور بم دہماکےکر کے غیرشرعی اور حرام فعل کا ارتکاب کر رہے ہیں۔

یہ جہاد نہ ہے کیونکہ جہاد کرنا حکومت وقت اور ریاست کی ، نا کہ کسی گروہ یا جتھے کی ذمہ داری ہوتا ہے۔ مزید براں جہاد اللہ کی خاطر ، اللہ کی خوشنودی کے لئے کیا جاتا ہے ۔

جہاد وقتال فتنہ ختم کرنے کیلئےہوتا ہے ناکہ مسلمانوں میں فتنہ پیدا کرنے کیلئے دہشتگرد تنظیمیں جہالت اور گمراہی کےر استہ پر ہیں۔.طالبان جہاد نہ کر رہے ہیں۔ وہ اپنے اقتدار کی جنگ کر رہے

 شرعی لحاظ سے محاربت و بغاوت، اجتماعی قتل انسانیت اور فساد فی الارض قرار دیا گیا ہے۔علمائے اسلام ایسے جہاد کو’’ فساد فی الارض ‘‘اور دہشت گردی قرار دیتے ہیں ۔ایسا جہاد فی سبیل اللہ کی بجائے جہاد فی سبیل غیر اللہ ہوتا ہے  ۔ طالبا ن کا طرز عمل، جہاد فی سبیل کے اسلامی اصولوں اور شرائط کے منافی ہے۔

اس قسم کی صورت حال کو قرآن مجید میں حرابہ سے تعبیر کیا گیا ہے۔ یہ انسانی معاشرے کے خلاف ایک سنگین جرم ہے انتہا پسند و دہشت گرد پاکستان کا امن تباہ کرنے اور اپنا ملک تباہ کرنے اور اپنے لوگوں کو مارنے پر تلے ہوئے ہیں۔ طالبان اپنے اقتدار کی جنگ لڑ رہے ہیں اور جہاد نہ کر رہے ہیں۔

 

 

 

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s