افغانستان: بم دھماکے میں سکھ برادری نشانے پر، 19 ہلاک


افغانستان: بم دھماکے میں سکھ برادری نشانے پر، 19 ہلاک

مشرقی افغانستان کے شہر جلال آباد میں ایک خودکش حملے میں 19 افراد ہلاک ہوگئے ہیں جن میں سے زیادہ تعداد سکھوں کی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ اتوار کو اس وقت پیش آیا جب یہ لوگ صدر اشرف غنی سے ملاقات کے لیے جا رہے تھے۔

ہلاک شدگان میں وہ سکھ شخص بھی شامل تھا جو کہ ملک میں آئندہ اکتوبر میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں واحد سکھ امیدوار بننے والا تھا۔ یاد رہے کہ افغانستان میں سکھ برادری ایک اقلیت ہے۔

دہشتگرد تنظیم دولتِ اسلامیہ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

حملے سے چند گھنٹے قبل ہی صدر اشرف غنی نے جلال آباد کے ہسپتال کا دورہ کیا تھا۔ حکام کا کہنا ہے کہ جس وقت حملہ ہوا اس وقت صدر غنی اس علاقے میں موجود نہیں تھے۔

افغانستان میں انڈین سفارتخانے نے اس حملے کی مذمت کی ہے۔ سفارتخانے نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ آئندہ انتخابات میں کھڑے ہونے والے واحد سکھ امیدوار اتوار سنگھ خالصہ کی ہلاکت ہو چکی ہے۔ سفارتخانے کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’یہ حملے بین الاقوامی دہشتگردی کے خلاف متحدہ عالمی جنگ کی ضرورت کی تائید کرتا ہے۔

ننگرہار کے شعبہِ صحت کے ڈائریکٹر نجیب اللہ کماوال نے اے ایف پی کو بتایا کہ ہلاک ہونے والوں میں 17 سکھ اور ہندو افراد تھے اور اس کے علاوہ 20 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

صوبے کے گورنر کے ترجمان کا کہنا تھا کہ حملہ آور نے گاڑی کو اس وقت نشانہ بنایا جب وہ مکھابرات سکوئر سے گزر رہی تھی اور دھماکے کی وجہ سے آس پاس کی دکانوں اور عمارتوں کو بھی شدید نقصان پہنچا ہے۔

https://www.bbc.com/urdu/regional-44677694

داعش کے خودکش حملے ،دہشتگردی اور بم دھماکے اسلام میں جائز نہیں یہ اقدام کفر ہے. اسلام ایک بے گناہ فرد کے قتل کو پوری انسانیت کا قتل قرار دیتا .معصوم شہریوں کو دہشت گردی کا نشانہ بنانا,خودکش حملے کرنا،قتل و غارت کرنا خلاف شریعہ ہے۔ اسلام میں خودکشی حرام ہے۔علمائے اسلام ایسے جہاد کوفی سبیل اللہ کی بجائے جہاد فی سبیل غیر اللہ کہتے ہیں۔اسلام ایک امن پسند مذہب ہے جو کسی بربریت و بدامنی کی ہرگز اجازت نہ.یں داعش خوارج قاتلوں ،جنونی ،انسانیت کے قاتل اور ٹھگوں کا گروہ ہے جو اسلام کی کوئی خدمت نہ کر رہاہے بلکہ مسلمانوں اور اسلام کی بدنامی کا باعث ہے اور مسلمان حکومتوں کو عدم استحکام میں مبتلا کر رہا ہے۔ داعش کے مظالم کے سامنے ہلاکو اور چنگیز خان کے مظالم ہیچ ہیں۔

دیگر طبقات معاشرہ کی طرح اسلامی ریاست میں اقلیتوں کو بھی ان تمام حقوق کا مستحق قرار دیا گیا ہے جن کا ایک مثالی معاشرے میں تصور کیا جا سکتا ہے۔ اقلیتوں کے حقوق کی اساس معاملات دین میں جبر و اکراہ کے عنصر کی نفی کر کے فراہم کی گئی، فرمایا گیا :

لَآ اِکْرَاهَ فِيْ الدِّيْنِ.

’’دین میں کوئی زبردستی نہیں۔‘‘

 البقره، 2 : 256

اسلامی معاشرے میں مسلمانوں پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اقلیتوں سے نیکی، انصاف اور حسن سلوک پر مبنی رویہ اختیار کریں۔ قرآن پاک میں ارشاد ہوتا ہے۔

لَا يَنْهَاكُمُ اللَّهُ عَنِ الَّذِينَ لَمْ يُقَاتِلُوكُمْ فِي الدِّينِ وَلَمْ يُخْرِجُوكُم مِّن دِيَارِكُمْ أَن تَبَرُّوهُمْ وَتُقْسِطُوا إِلَيْهِمْ إِنَّ اللَّهَ يُحِبُّ الْمُقْسِطِينَO

’’اللہ تمہیں اس بات سے منع نہیں فرماتا کہ جن لوگوں نے تم سے دین (کے بارے) میں جنگ نہیں کی اور نہ تمہیں تمہارے گھروں سے (یعنی وطن سے) نکالا ہے کہ تم ان سے بھلائی کا سلوک کرو اور اُن سے عدل و انصاف کا برتاؤ کرو، بیشک اللہ عدل و انصاف کرنے والوں کو پسند فرماتا ہےo‘‘

 الممتحنة، 60 : 8

اسلامی معاشرے میں اقلیتوں کے حقوق کو کتنی زیادہ اہمیت دی گئی ہے اس کا اندازہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اس فرمان سے ہوتا ہے :

ألاَ مَنْ ظَلَمَ مُعَاهِدًا أو انْتَقَصَهُ أوْ کَلَّفَهُ فَوْقَ طَاقَتِهِ أوْ أخَذَ مِنْهُ شَيْئًا بِغَيْرِ طِيْبِ نَفْسٍ فَأنَا حَجِيْجُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

’’خبردار! جس کسی نے کسی معاہد (اقلیتی فرد) پر ظلم کیا یا اس کا حق غصب کیا یا اس کو اس کی استطاعت سے زیادہ تکلیف دی یا اس کی رضا کے بغیر اس سے کوئی چیز لی تو روزِ قیامت میں اس کی طرف سے (مسلمان کے خلاف) جھگڑوں گا۔

ذمیوں کے اموال اور املاک کی حفاظت بھی اسلامی حکومت کی ذمہ داری ہے۔ جوغیر مسلم اسلامی ریاست میں قیام پذیر ہوں اسلام نے ان کی جان، مال، عزت وآبرو اور مذہبی آزادی کے تحفظ کی ضمانت دی ہے۔اور حکمرانوں کو پابند کیا ہے کہ ان کے ساتھ مسلمانوں کے مساوی سلوک کیا جائے۔ ان غیر مسلم رعایا(ذمیوں) کے بارے میں اسلامی تصوریہ ہے کہ وہ اللہ اور رسول کی پناہ میں ہیں۔ا س بناء پر اسلامی قانون ہے کہ جو غیر مسلم، مسلمانوں کی ذمہ داری میں ہیں ان پر کوئی ظلم ہوتو اس کی مدافعت مسلمانوں پر ایسی ہی لازم ہے جیسی خود مسلمانوں پر ظلم ہو تو اس کا دفع کرنا ضروری ہے۔(مبسوط سرخسی:۱/۸۵(

Advertisements