جلال آباد شہر دھماکے میں ایک بچے سمیت 10 شہری ہلاک ، 27 مزید زخمی


جلال آباد شہر دھماکے میں ایک بچے سمیت 10 شہری ہلاک ، 27 مزید زخمی

ننگرہار کے صوبائی دارالحکومت جلال آباد شہر میں ایک دھماکے میں ایک بچے سمیت دس شہری ہلاک اور کم از کم 27 دیگر زخمی ہوگئے۔ صوبائی حکومت کے جاری کردہ بیان کے مطابق ، یہ دھماکہ شہر کے تیسرے ضلع میں مقامی وقت کے مطابق شام ساڑھے چار بجے ہوا۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ دھماکہ خیز مواد سے بھری موٹرسائیکل افغان فوج کے محکمہ بھرتی کے منی بس کے قریب پھٹی۔ طالبان  کی دہشتگردی اور بم دھماکے اسلام میں جائز نہیں یہ اقدام کفر ہے. یہ جہاد نہ ہے بلکہ دہشتگردی گردی ہے۔ بیگناہ مسلمانوں کا قتل اور دہشت گردی اسلام میں قطعی حرام بلکہ کفریہ اعمال ہے۔بے گناہ انسانیت کا قتل شریعت اسلامیہ میں حرام ہے۔ارشاد ربانی ہے’’اور جو کوئی کسی مسلمان کو جان بوجھ کر قتل کرے تو اس کا بدلہ جہنم ہے کہ مدتوں اس میں رہے اور اللہ نے اس پر غضب کیا اور اس پر لعنت کی اور اس کے لئے تیار رکھا بڑا عذاب ۔دنیا کا کوئی مذہب بشمول اسلام حالت جنگ میں بھی خواتین اور بچوں کو نشانہ بنانے کی اجازت نہیں دیتا،  بم دھماکے میں معصوم بچوں کو نشانہ بنایا گیا، یہ کہاں کی بہادری ہے؟